مرجع عالی قدر اقای سید علی حسینی سیستانی کے دفتر کی رسمی سائٹ

سوال و جواب » شعایر حسینیہ

۱ سوال: محرم الحرام میں عاشوراء کے روز بعض خواتین اپنے بالوں کو نوچتی ہیں تو کیا یہ جائز ہے؟ اور کیا اس پر کوئی کفارۃ بھی ہوتا ہے؟
جواب: ایسا کرنا جائز ہے اور اس پر کوئی کفارہ نہیں ہے۔
۲ سوال: کیا کسی کنواری لڑکی یا شادی شدہ خاتون کے لیئے نماز جماعت یا دینی درس یا مجالس عزاء میں شرکت کی غرض سے مسجد میں جانا درست ہے جبکہ اسکا باپ یا شوہر راضی نہ ہو؟ آیا اشکال صرف اسوقت ہے کہ جب شوہر کی حق تلفی ہوتی ہو؟ یا بہر صورت میں اس کا باہر جانا جائز نہیں ہے؟
جواب: شادی شدہ خاتون کا شوہر کی اجازت کے بغیر گھر سے نکلنا اگر اس شوہر کی حق تلفی ہو تو جائز نہیں ہے اور اگر حق تلفی نہ ہو تو بھی بنا بر احتیاط واجب نہ جاۓ، اور غیر شادی شدہ لڑکی کا اسطرح سے باہر جانا اگر باپ کیلیئے( اس کی شفقت کی وجہ سے) اذیت کا باعث ہو،جیسا کہ عام طور پر جوان لڑکیوں کے گھر سے باہر جانے پر موجودہ خطرات سے باپ کو خوف ہوتا ہے تو جائز نہیں ہے۔
۳ سوال: روضہ خوانی کرنے والی خاتون کی آواز کو سننے میں تلذذ اور ہیجان سے کیا مراد ہے؟ اگر حال یہ ہو کہ بعض لوگوں کو ہیجان ہوتا ہو اور جبکہ بعض کی شہوت میں کوئی ہیجان نہ ہوتا ہو تو کیا حکم ہے؟
جواب: اس مسئلے میں ہیجان سے مراد جنسی لطف اندوزی اور جذبات کا بھڑکنا ہے، اور آواز کے سنانے(اسماع) میں ھیجان کا اعتبار نوعی ہے یعنی عادتاً اس طرح سے لوگوں کی شھوت نہ بھڑکتی ہو، جبکہ (استماع) یعنی توجہ سے سننے میں معیارِ حرمت شخصی ہے یعنی اگر صرف سننے والے شخص ہی کو شہوت و لذت جنسی حاصل ہو رہی ہو، تو بھی سننا حرام ہے۔
۴ سوال: کیا مجلس عزاء اور مرثیہ و نوحہ پڑھنے والی خاتون کے لیئے اپنی آواز غیر مرد کو سنانا جائز ہے؟اور کیا مرد کیلیئے اسے سننا جائز ہے؟اور سماع غیر متعمد (بغیر ارادے کے سننا) جیسا کہ اگر پڑوس میں خواتین کی مجلس ہورہی ہو اور کوئی مرد اپنے گھر میں بیٹھا ہو جسے آواز آرہی ہو،تواسکا کیا حکم ہے؟
جواب: اگرآواز میں باریکی،خوبصورتی و بناؤ اورہیجان انگیزی نہ ہو تو ،خاتون کی لیٔے اپنی آواز سنانا جائز ہے، البتہ مرد کی لیٔے اس کی آواز کو سننا اسوقت جائز ہے جب شہوت انگیز نہ ہو اور دل میں میل نہ آئے،اور وہ اپنے نفس پرحرام میں مبتلا ہونے کا خوف بھی نہ رکہتا ہو، البتہ ایسا ہونے کا فقط شک ہو تو اس صورت میں احتیاط ہی مناسب ہے، بلکہ بہتر ہے کہ بغیر ضرورت کے نہ سنایا جائے اور نہ ہی سنا جائے۔
۵ سوال: آیا یہ بہتر ہے کہ عزاداری میں پورا مجمع جمع ہونے سے پہلے ہی جلوس نکال لیا جائے تاکہ وقت نماز ہونے سے پہلے ہی عزاداری مکمل کرلی جائے؟ یا بصورت دیگر زیادہ عزاداروں کے جمع ہونے کا انتظار کر لیا جائے جبکہ اس صورت میں نماز کا وقت مراسم عزاء کے مکمل ہونے سے پہلے ہی درمیان میں آجائے گا؟
جواب: عزاداروں کا پورا مجمع جمع ہونے کا انتظار کیا جاسکتا ہے البتہ جب نماز کا وقت ہوجائے تو مناسب یہ ہے کہ مراسمِ عزاء کو روک کر پہلے نماز ادا کی جائے اور پھرعزاداری مکمل کی جائے۔
۶ سوال: کیا عزاداری کے درمیان نماز کا وقت ہو جانے پر جیسا کہ نمازظہر کا وقت عزاداری کے درمیان آتا ہے عزاداری کو روک دینا واجب ہے؟ اورکیا اس صورت میں مراسم عزاء کو جاری بھی رکھا جاسکتا ہے؟ دونوں صورتوں میں سے افضل کیا ہے؟
جواب: افضل یہ ہے کہ نماز کو اول وقت میں ہی بجا لایا جاۓ اور کوشش کریں کہ عزاداری کو اسطرح منظم کریں کہ وقت نماز سے مزاحمت نہ ہو۔
۷ سوال: (طبل اور بوق) اور ان جیسے آلات کا عزاداری کے جلوسوں میں استعمال کرنا کیا حکم رکھتا ہے؟
جواب: ان آلات کو عزاداری کے جلوس میں معروف طریقے سے استعمال کرنے میں اگر گانے بجانے کی محفلوں کے مناسب نہ ہو تو جایز ہے۔
۸ سوال: ہمارے علاقے میں بحرینی طریقہ عزاء پر مجالس حسینیہ کا انعقاد ہوتا ہے، وہ اسطرح کہ مجلس و ماتم کو لحن کے ساتھ پڑھا جاتا ہے اور شاید اسکے بعض لحن غناء و گانے بجانے کے اس انداز لحن سے مشابھ ہو جاتے ہیں کہ جو لھو و لعب کی محافل میں ہوا کرتا ہے، تو کیا اسطرح کے لحن و اطوار کو مجالس عزاء حسینی میں استعمال کیا جا سکتا ہے ؟
جواب: جب تک اس لحن و طرز کا اہل لعب و لھو کے متعارف لحن میں سے ہونا یقینی نہ ہو، تو اسکا استعمال مجلس عزاء میں جائز ہے۔
۹ سوال: امام حسینؑ کے یوم تاسوعاء (۹محرم) کے دن تجارتی مراکز و دکانیں کھولنا کیا حکم رکھتا ہے؟
جواب: اگر یہ کام اھل بیت علیھم السلام پر ان دنوں میں گزرنے والے مصائب سے بے اعتنائی شمار ہو تو پھر اس سے گریز کرنا چاہیے۔
۱۰ سوال: کچھ ویڈیو سیڈیز ایسی بھی ہوتی ہیں کہ جن میں بعض نوجوان بغیر قمیص کے ماتم داری کر رہے ہوتے ہیں تو کیا خواتین کے لیئے ایسی ویڈیو دیکھنا جائز ہے؟
جواب: خاتون کے لیئے بنا بر احتیاط واجب جائز نہیں ہے کہ وہ مرد کے جسم کے وہ حصے دیکھے جن کا دیکھنا متعارف نہیں ہے جیسا کے سینا یا پیٹ کا حصہ۔
ایک نیا سوال بھیجنے کے لیے یہاں کلک کریں
العربية فارسی اردو English Azərbaycan Türkçe Français